68

پنجاب حکومت چیئرمین راوی اربن پروجیکٹ کو ہر ماہ 15 لاکھ تنخوا ادا کرے گی

حکومت پنجاب نے راوی اربن پراجیکٹ کے چیئرمین کی تعیناتی کردی ہے اور ان کی تنخواہ 15 لاکھ مقرر کی گئی ہے۔

ماضی میں چیف جسٹس پاکستان ثاقب نثار نے اس وقت کے وزیراعلی پنجاب شہباز شریف کی جانب سے پاکستان کڈنی اینڈ لیور ٹرانسپلانٹ کے چیئرمین کی 15 لاکھ روپے ماہانہ تنخواہ مقرر کرنے پر نوٹس لیا تھا۔

پنجاب حکومت کی جانب سے جاری کردہ نوٹیفکیشن کے مطابق حکومت پنجاب نے عمران امین کو راوی اربن ڈولیپمنٹ اتھارٹی کا چیئرمین مقرر کیا ہے اور3 لاکھ روپے بنیادی تنخواہ مقرر کی ہے۔

نوٹیفکیشن کے مطابق چیئرمین کو بنیادی تنخواہ کے علاوہ ہر ماہ 8 لاکھ روپے ڈویلپمنٹ الاؤنس، 2لاکھ 40 ہزار روپے ہاؤس الاؤنس، ڈیڑھ لاکھ روپے یوٹیلیٹی بلز کی مد میں دیئے جائیں گے، اس کے علاوہ عمران امین کو ایک 1300 سی سی گاڑی بمعہ ڈرائیو اور لاہور میں سفر کرنے کیلئے300 لیٹر پیٹرول بھی ہر ماہ دیا جائے گا۔

نوٹیفکیشن میں مزید کہا گیا ہے کہ مزید دوروں کیلئے ضرورت کے مطابق انہیں پیٹرول فراہم کیا جاسکے گا، انہیں ایک 22 ویں گریڈ افسرکے برابر ٹریول الاؤنس اور صحت کی سہولت بھی ملے گی اور موبائل کے خرچ کی مد میں 10 ہزار روپے ادا کیے جائیں گے۔

پنجاب حکومت کی جانب سے تعینات کیے گئے چیئرمین راوی اربن پروجیکٹ کی تنخوا کیا ہو گی؟

نوٹیفکیشن کے مطابق مجموعی طور پر چیئرمین راوی اربن ڈویلپمنٹ اتھارٹی کو ہر ماہ 15 لاکھ روپے ادا کیے جائیں گے،جبکہ دیگر سہولیات اس کے علاوہ ہیں۔

یاد رہے کہ سابق وزیراعلی شہباز شریف نے پاکستان لیور اینڈ کڈنی ٹرانسپلانٹ سینٹر(پی کے ایل آئی) کے سربراہ کی تنخواہ 15 لاکھ روپے مقرر کی تھی جس پر اس وقت کے چیف جسٹس پاکستان ثاقب نثار نے از خود نوٹس لیا تھا اور بعد میں اس تعیناتی کو منسوخ کردیا گیا تھا۔

دیکھنا ہوگا کہ موجودہ حکومت کی جانب سے ایک منصوبے کے چیئرمین کی 15 لاکھ روپے تنخواہ مقرر کرنے پر معزز عدلیہ کوئی نوٹس لے 

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں