131

ایک وفاقی وزیر لوگوں پر قتل کے فتوے لگا رہے ہیں، پلوشہ خان

اسلام آباد (الشامی نیوز) ڈپٹی سیکرٹری اطلاعات پلوشہ خان نے کہا کہ ایک وفاقی وزیر لوگوں پر قتل کے فتوے لگا رہے ہیں کیا اس ملک میں آئین اور قانون نام کی کوئی چیز موجود ہے؟

پاکستان پیپلز پارٹی کی مرکزی سیکرٹری اطلاعات ڈاکٹر نفیسہ شاہ کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے پلوشہ خان نے کہا کہ وفاقی وزیر کے بیان پر ایف آئی آر کٹ جانی چاہیے تھی لیکن یہ کھلم کھلا پھر رہے ہیں۔ ہمارا مطالبہ ہے کہ چیف جسٹس آف پاکستان کو اس معاملے کا نوٹس لینا چاہیے۔

پلوشہ خان نے کہا کہ سرور خان ایسے وزیر ہیں جو 1985سے ہر ٹانگے کی سواری رہے ہیں۔انہوں نے پاکستان ائیرلائن کا بیڑہ غرق کر دیا ہے اور دوسروں پر واجب القتل کے فتوے دے رہے ہیں جبکہ ان کے لیڈر خودکشی کی بات کرتے تھے۔

انہوں نے کہا کہ ایک وزیر نے محکمہ زراعت کے حوالے سے بیان دیا ہے کہ میں محکمہ زراعت سے کہتی ہوں کہ ایسی سنڈیوں کو تلف کیا جائے جو فصلیں تباہ کرتی ہیں۔

پی پی رہنما نے مزید کہا کہ غلام سرور خان کو لوٹ مار کا درد ہے تو وہ شروعات خود سے کریں، واجب القتل وہ لوگ ہیں جنہوں نے ملک میں روٹی 20 روپے کی کردی ہے۔

پلوشہ خان نے یہ بھی کہاکہ ملک کی حالت انتہائی خراب کردی ہے، خارجہ پالیسی کہیں نظر نہیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں