159

سرکاری نرخ پر روٹی فروخت نہیں کر سکتے انتظامیہ جبری طور پر روٹی کے نرخ کم کروانا چاہتی ہے، فیصل امین صدر سکھر نان بائی ایسوسی ایشن

سکھر: نان بائیوں کا سرکاری نرخ پر روٹی کی فروخت سے انکار

سرکاری نرخ پر روٹی فروخت نہیں کرسکتے انتظامیہ جبری طور پر نرخ کم کروانا چاہتی ہے نان بائی ایسوسی ایشن نے سرکاری نرخ پر روٹی فروخت کرنے سے انکار کردیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق سکھر میں نان بائی ایسوسی ایشن نے شہر بھر میں ہڑتال کرتے ہوئے تندور بند کردیے ہیں۔

اے ڈی سی سکھر عدنان رشید کے مطابق شہر میں مہنگی روٹی کی فروخت کی شکایت پر نان بائیوں کے خلاف کارروائی کی گئی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ نان بائی 15 روپے میں روٹی فروخت کررہے تھے جبکہ قیمت 12 روپے مقرر ہے۔

عدنان رشید کے مطابق مہنگی روٹی فروخت کرنے والے نان بائیوں کے خلاف مزید کارروائی کی جائے گی۔

دوسری طرف شہر بھر کے تندوروں کی دکانوں کے شٹر پر سیاہ بینرز آویزاں کردیے گئے ہیں۔

نان بائی ایسوسی ایشن کے صدر فیصل امین کا کہنا ہے کہ انتظامیہ جبری طور پر روٹی کے نرخ کم کرانا چاہتی ہے اگر یہ سلسلہ جاری رہا تو تندور مالکان دیوالیہ ہوجائیں گے فیصل امین کا مزید کہنا تھا کہ جب پنجاب کے میدے کی بوری کے نرخ 4600روپے تھے تب بھی ہم روٹی 15 روپے میں فروخت کر رہے تھے اس وقت مارکیٹ میں پنجاب کے میدے کی بوری کے نرخ 5700 روپے ہے اس صورت میں حکومت کے مقرر کردہ نرخ 12 روپے میں کس طرح سے روٹی فروخت کی جائے گزشتہ ہفتے انتظامیہ کے ساتھ تفصیلی میٹنگ ہوئی تھی میٹنگ میں یہ طے پایا تھا کہ روٹی کے نرخ 15 روپے سے زائد کرنے کے لیے انتظامیہ نے کچھ ٹائم مانگا تھا گزشتہ چند روز سے بلا جواز انتظامیہ کی طرف سے تندور مالکان کو ہراساں کیا جا رہا ہے اور جبری طور پر جرمانے عائد کیے جا رہے ہیں انتظامیہ کے اس عمل کی ہم شدید مذمت کرتے ہیں انہوں نے سندھ کے اعلی حکام سے اپیل کی ہے کہ سکھر انتظامیہ کے مذکورہ عمل کا نوٹس لیا جائے ہمارے ساتھ ناانصافی بند کی جائے بصورت دیگر احتجاج کا دائرہ وسیع کر دیا جائے گا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں