46

ایوان صدر آڈئینس کی فیکٹری بن چکا ہے غداری کے مقدمے بنائے جارہے ہیں شیری رحمان

اسلام آباد ( الشامی نیوز) ایوان صدر آرڈیننس فیکٹری بن چکا ہے، غداری کے مقدمے بنانے سے قبل ملک کو چلانے کا کوئی منصوبہ تو بنائیں، ایسا لگتا ہے پر چڑھنے کی تیاری کر رہے ہیں تاہم یہ حکومت اب زیادہ وقت نہیں چلے گی

تفصیلات کے مطابق پیپلز پارٹی کے دیگر رہنماؤں کے ہمراہ پریس کانفرنس کے دوران شیری رحمٰن نے کہا کہ تباہی سرکار نے صرف تباہی پھیری ہے، دو سال میں یہ ملک کو ایف اے ٹی ایف کی گرے سے نہیں نکال سکے، راتوں رات بنائے گئے غلط قوانین کی وجہ سے آپ ابھی بھی گرے لسٹ میں ہیں جس کی حکومت کو وضاحت کرنی چاہیے۔

انہوں نے کہا کہ ہم حکومت کی مدد کرنے کو تیار ہیں، لیکن وہ پارلیمان میں تو آئیں، کشمیر پر بھارتی قبضے کے خلاف یوم سیاہ پر پارلیمنٹ کا مشترکہ اجلاس کیوں نہیں بلایا گیا۔

ان کا کہنا تھا کہ اس وقت تک ملک کا اصل مسئلہ مہنگائی ہے لیکن اس کے بارے میں کوئی بات نہیں کی جارہی کیونکہ حکومت نے ہم سب کو بیانیے کی جنگ میں الجھا رکھا ہے، یہ تقسیم اور نامعلوم سرکار ہے جو کمر توڑ مہنگائی کے معاملے پر چُپ ہے، دسمبر تک ملک میں آٹے کا بحران سنگین ہونے والا ہے، چینی بحران پر کمیشن بنا لیکن کچھ نہیں ہوا اور جن کے نام ہیں کابینہ میں ان کی کرسیاں بدلیں اور وہ باہر چلے گئے۔

شیری رحمٰن نے کہا کہ نیب تو صرف اپوزیشن کے لیے ہے، حکومت کی بی آر ٹی کی بسیں جلیں نیب کو کوئی فرق نہیں پڑتا، اس پر کوئی انکوائری نہیں ہوگی، پنجاب میں ان کے دوستوں کی ملیں گندم کی ذخیرہ اندوزی کر رہی ہیں، سردیاں آنے سے قبل ہی گیس کا بحران شدید ہوگیا ہے جبکہ دوسری جانب توانائی کے شعبے کا گردشی قرضہ آسمان پر پہنچ چکا ہے۔

انہوں نے کہا کہ جس طرح یہ لوگ کشمیر، خارجہ پالیسی اور ایف اے ٹی ایف معاملات پر غائب ہیں جس کے بعد سوال تو اٹھتا ہے کہ ملک کو کون چلا رہا ہے، توانائی شعبے کا بحران سنگین ہوچکا ہے، پولیو واپس آگیا ہے، مہنگائی آسمان سے باتیں کر رہی ہے، چینی و گندم کا بحران ہے قرض کونسا شعبہ ایسا ہے جس میں بحران نہ ہو۔

ان کا کہنا تھا کہ پارلیمنٹ کو بےتوقیر کیا جارہا ہے، ایوان صدر آرڈیننس فیکٹری بن چکا ہے، غداری کے مقدمے بنانے سے قبل ملک کو چلانے کا کوئی منصوبہ تو بنائیں، ایسا لگتا ہے پر چڑھنے کی تیاری کر رہے ہیں تاہم یہ حکومت اب زیادہ وقت نہیں چلے گی۔

رہنما پیپلز پارٹی نے ایک سوال پر کہا کہ پی ڈی ایم کے تین جلسے دیکھ کر حکومت کے ہاتھ پاؤں پھول چکے ہیں اور یہ اپوزیشن اور پارلیمان کو تقسیم کرنے کے علاوہ کچھ نہیں کر رہی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں